Search
Close this search box.

فہرست موضوعات

عرض ناشر
دیباچہ
باب اول: قادیانی مسئلہ
ختم نبوت کی نئی تفسیر:
مرزا غلام احمد قادیانی کا دعویٰ نبوت:
قادیانی ایک علیحدہ اُمت :
قادیانیوں کا مذہب مسلمانوں سے جدا ہے :
نئے مذہب کے نتائج :
قادیانیوں کو علیحدہ اُمت قرار دینے کامطالبہ :
ذمہ داران حکومت کا رویہ :
مسلمانوں میں شغل تکفیر:
مسلمانوں میں دوسرے فرقے:
قادیانیوں کے سیاسی عزائم:
پاکستان میں قادیانی ریاست :
قادیانیوں کو اقلیت قرار دینے کا مطالبہ :
قادیانیوں کی تبلیغ کی حقیقت :
انگریزی حکومت کی وفاداری :
قادیانیت کے بنیادی خدوخال :
مسلمانوں کا مطالبہ :
قادیانیوں کو اقلیت قرار دینے کے لیے علما کی متفقہ تجویز
علما کے نام
باب دوم: مقدمہ
دیباچہ
جماعت اسلامی کی مخالفت
دیانت داری کاتقاضا :
مخالفین کی بے بسی :
مولانامودودی ؒ کا اصل جرم :
مقدمہ کا پس منظر:
سزائے موت :
ایک عجیب منطق :
رہائی کامطالبہ بھی جرم؟
ہمارے صحافی اوران کاضمیر:
اے پی پی کا افترا:
فرد جرم نمبر۱
بیان نمبر۱: مولانا سید ابوالاعلیٰ مودودی
مولانا سیدابوالاعلیٰ مودودی کے دو اخباری بیانات
فرم جرم نمبر۲
بیان نمبر۲ :مولاناسیدابوالاعلیٰ مودودی
مضمون : سزائے موت کے خلاف رحم کی اپیل کی گنجائش
چنداہم نکات
باب سوم
پہلابیان
وہ حالات جولاہور میں مارشل لا جاری کرنے کے موجب ہوئے
اصل مسئلہ اوراس کاپس منظر:
معاشرتی پہلو:
معاشی پہلو:
سیاسی پہلو:
تلخی پیداہونے کے مزیدوجوہ:
لازمی نتیجہ:
قادیانیوں کی اشتعال انگیزی:
مکروہ تقلید :
جماعتیں مسئلے پیدانہیں کرسکتیں:
شتابہ:
جماعت اسلامی کی مساعی:
بے تدبیری کاقدرتی ردعمل:
عام ناراضگی کے اسباب:
ایں گنا ہیست کہ درشہر شمانیز کنند:
ذمہ داری تمام تر بارڈر پولیس کے ظلم وستم پر ہے :
اصلاح حال کی کوشش :
مسلم عوام سر پھرے نہیں ہیں :
مارشل لا :
(۲) اضطراب کو روکنے اور بعد میں ان سے عہدہ برآہونے کے لیے سول حکام کی تدابیر کا کافی یا ناکافی ہونا :
(۳) اضطرابات کی ذمہ داری :
قادیانی مسئلہ کے متعلق میرااور جماعت اسلامی کاطرزعمل
’’رواداری‘‘کانرالاتصور:
غلطی کوغلطی نہ کہو:
عدالت سے درخواست:
اہم حقائق وواقعات
جماعت اسلامی کی دستاویزی شہادت:
قادیانیوں کومشورہ:
احسان شناسی:
دوسرابیان
قادیانیوں سے متعلق مطالبات بیک وقت سیاسی بھی ہیں اورمذہبی بھی:
مسلمانوں اورقادیانیوں کے اختلافات بنیادی ہیں:
تمام منحرفین کواقلیت قراردینے کامطالبہ ضروری نہیں:
ظفراللہ خان کی علیحدگی کے مطالبے کے وجوہ:
کلیدی مناصب کامفہوم اورمطالبہ علیحدگی کے لیے دلائل:
عدالت کے سامنے پیش کردہ قادیانیوں کی بناوٹی پوزیشن:
قادیانیوں کی جارحانہ روش محض اتفاقی نہیں ہے:
کفر‘تکفیراورخروج ازاسلام :
گواہوں کاکٹہراعلمی بحث کے لیے موزوں نہیں:
دستوریہ میں قائداعظمؒ کی افتتاحی تقریرکاصحیح مدعا:
کیاقائداعظمؒ کی تقریردستوریہ کوپابندکرسکتی ہے:
اسلامی ریاست نہ تھیاکریسی ہے اورنہ مغربی طرزکی جمہوریت:
اسلام میں قانون سازی:
اسلامی ریاست کے مطالبے کے حق میں معقول وجوہ موجودہیں:
اسلامی ریاست میں ذمیوں کی حیثیت:
مرتدکی سزااسلام میں:
اسلامی قانون جنگ اورغلامی:
اسلام اورفنون لطیفہ:
فقہی اختلافات اسلامی ریاست کے قیام میں حائل نہیں:
جماعت اسلامی اورڈائریکٹ ایکشن:
۳۰/جنوری کی تقریرمیں فسادات کی دھمکی نہیں بلکہ تنبیہہ تھی:
ڈائریکٹ ایکشن کارائج الوقت تصوراورمفہوم:
ڈائریکٹ ایکشن قطعی حرام نہیں:
راست اقدام کے لیے شرائط مکمل نہ تھیں:
حکومت کی تنگ ظرفی سے جوابی تشددکاخطرہ تھا:
ڈائریکٹ ایکشن کی علانیہ مخالفت نہ کرنے کی وجہ:
تیسرابیان (جومورخہ ۱۳/فروری ۱۹۵۴ء کوتحریری شکل میں عدالت مذکور میں پیش کیاگیا۔)
بجواب نکتہ اول :(الف) درباب نزول مسیح علیہ السلام

قادیانی مسئلہ

اس ویب سائٹ پر آپ کو خوش آمدید کہتے ہیں۔ اب آپ مولانا سید ابوالاعلیٰ مودودی رحمتہ اللہ علیہ کی کتابوں کو ’’پی ڈی ایف ‘‘ کے ساتھ ساتھ ’’یونی کوڈ ورژن‘‘ میں بھی پڑھ سکتے ہیں۔کتابوں کی دستیابی کے حوالے سے ہم ’’اسلامک پبلی کیشنز(پرائیوٹ) لمیٹڈ، لاہور‘‘، کے شکر گزار ہیں کہ اُنھوں نے اس کارِ خیر تک رسائی دی۔ اس صفحے پر آپ متعلقہ کتاب PDF اور Unicode میں ملاحظہ کیجیے۔

ضمیمہ نمبر(۱۰) عدلیہ کے فیصلے (۱)فیصلہ منشی محمداکبرخاںصاحب۔ڈسٹرکٹ جج بہاولنگر (قادیانی مرتدہیں یعنی دائرہ اسلام سے خارج ہیں۔)

۲۴/جولائی ۱۹۲۶ء کوموضع مہاندتحصیل احمدپورشرقیہ ریاست بہاولپورکے ایک باشندے مولوی الٰہی بخش نے اپنی لڑکی غلام عائشہ کی طرف سے احمدپورشرقیہ کی ماتحت عدالت میںعبدالرزاق قادیانی کے خلاف ایک دعویٰ دائرکیا۔مدعیہ کاموقف تھاکہ عبدالرزاق جس کے ساتھ اس کانکاح بلوغت سے پہلے کردیاگیاتھاقانوناًاب اس کا خاوند نہیںرہاکیونکہ قادیانی مذہب اختیارکرنے کے نتیجہ میںوہ مرتدہوگیاہے اورقانون شریعت کے مطابق ارتدادکی بنیادپرنکاخ منسوخ قرارپاتاہے۔
مدعاعلیہ کاجواب یہ تھاکہ قادیانی مسلمانوںہی کاایک فرقہ ہیںاورانہیںان کے عقائدکی بنیادپرکافریامرتدقرارنہیںدیاجاسکتا۔اس لیے تنیسخ نکاح کادعویٰ بے بنیادہے۔
یہ مقدمہ مختلف مراحل سے گزرتاہوامنشی محمداکبرخاں صاحب بی۔اے ایل ایل بی ڈسٹرکٹ جج بہاولنگرکے سامنے سماعت کے لیے پیش ہوا۔فاضل جج نے کئی سال کی بحث کے بعدجس میںفریقین کے مشہورعلمااورمذہبی رہنمائوںنے حصہ لیا‘اپنافیصلہ فروری ۱۹۳۵ء کودیاجودرج ذیل ہے:
فیصلہ
’’مدعیہ کی طرف سے یہ ثابت کردیاگیاہے کہ مرزاصاحب (مرزاغلام احمد قادیانی) نبوت کے جھوٹے دعوے دارتھے۔اس لیے مدعاعلیہ جومرزاصاحب کونبی مانتاہے،لازماً مرتدقراردیاجائے گا۔وہ ابتدائی امورجواحمدپورشرقیہ کے فاضل منصف نے تنقیح طلب قراردئیے تھے‘مدعیہ کے حق میںثابت ہوچکے ہیں۔اس لیے مدعاعلیہ کوقادیانی مذہب اختیارکرلینے کی وجہ سے مرتدقراردیاجاتاہےاوراسی بناپراس کانکاح مدعاعلیہ کی تاریخ ارتدادسے منسوخ ہوگیاہے۔
اگرمدعاعلیہ کے مذہبی عقائدکاجائزہ اس بحث کی روشنی میںبھی لیاجائے جس کی تفصیل پہلے آچکی ہے‘تب بھی مدعیہ‘مدعاعلیہ کے دلائل کے مقابلہ میںیہ بات ثابت کرنے میںکامیاب ہوگئی ہے کہ حضرت محمدﷺ کے بعدکوئی امتی نبی نہیںآئے گا۔ مزیدبرآںیہ عین ممکن ہے کہ دوسرے مذہبی عقائدجومدعاعلیہ نے اپنی طرف منسوب کیے ہیںاپنی ظاہری شکل میںدین اسلام کے اصولوںسے مطابقت رکھتے ہوںلیکن اس بارے میںسمجھایہی جائے گاکہ مدعا علیہ ان عقائدکے اسی مفہوم و منشاپرعمل پیراہے جومرزا صاحب نے ان کوپہنایاہے۔پوری امت مسلمہ نے ان عقائدکاجومفہوم ومنشاقراردیاہے وہ چونکہ اس سے متصادم ہے اس لیے مدعاعلیہ کومسلمان نہیںکہاجاسکتا۔غرضیکہ دونوں صورتوں میںمدعاعلیہ یقیناً مرتدہوچکاہے اورایک مرتد کا نکاح‘اس کے ارتدادکی وجہ سے منسوخ قرارپاتاہے۔اس لیے مدعیہ کے حق میںیہ حکم دیاجاتاہے کہ مدعیہ، مدعاعلیہ کے ارتدادکی تاریخ سے ا س کی بیوی نہیںہے اورمقدمہ کے اخراجات کی وصولی کی حق دارہے۔‘‘

شیئر کریں